Home » ڈپریشن کا علاج|Depression Treatment

ڈپریشن کا علاج|Depression Treatment

migraine-treatment,-migraine-symptoms

ڈپریشن کیا ہے؟ایک یا دو ہفتوں میں ٹھیک ہو جاتی ہیں۔ اداسی کی کوئی ٹھوس وجہ ہو بھی سکتی ہے اور نہیں بھی۔ اس دورانیے میں ہم اپنے عزیزواقارب سے رجوع کر سکتے ہیں جو کہ اکثر اوقات سود مند ثابت ہو تا ہے۔ اگر اداسی کی علامات برقرار رہیں، روز مرہ کی زندگی متاثر ہونے لگے اور عام تدابیر سے آفاقہ نہ آئے تو یہ ڈپریشن کہلاتا ہے۔
ڈپریشن میں کیا محسوس کیا جا تا ہے؟
ڈپریشن کی شدت اور دورانیہ معمولی اداسی سے زیادہ طویل ہوتا ہے۔ درج ذیل ًعلامات ڈپریشن کی نشاندہی کرتی ہیں۔ مگر یہ ضروری نہیں کہ ایک مریض میں تمام علامات موجود ہوں۔ عمومی طور پر ۵-۶ علامات کا ہونا ڈپریشن کی تشخیص کرتا ہے۔
1۔ اکثر اوقات میں اداسی (شب میں کچھھ بہتری)
۲۔ دل برداشتہ ہونا اور تفریح میں کمی
۳۔ فیصلے کرنے میں مشکلات
۴۔ جسمانی تھکن
۵۔ بے چینی اور چڑچڑاپن
۶۔ بھوک میں کمی اور وزن کا گھٹنا (بعض افراد میں بھوک اور وزن کا اضافہ)
۷۔ نیند میں کمی اور پہلے سے جلد جاگنا
۸۔ جنسی دلچسپی میں کمی
۹۔ خود اعتمادی کی قلت
۱۰۔ دن کے خاص پہر میں زیادہ علامات، عموماً صبح
۱۱۔ خودکش خیالات
اکثر و بیشتر ہم ڈپریشن کی نشاندہی نہیں کر سکتے جس سے روزمرہ زندگی متاثر ہوتی ہے۔ اپنے آپ کو مصروف کرنے کی کاوش میں ڈپریشن سے ہماری جدوجہد جاری رہتی ہے۔ ان تدابیر سے ہم مزید پریشانی اور تھکن میں مبتلا ہو جاتے ہیں۔ ڈپریشن کی ظاہری علامات سر یا جسمانی درد اور نیند میں کمی بھی ہو سکتی ہیں۔
یہ کیوں ہوتا ہے؟
ڈپریشن کی ٹھوس وجہ ہو بھی سکتی ہے اور نہیں بھی۔ ہر فرد کا تجربہ ایک دوسرے سے مختلف ہوتا ہے۔مثلاً ناامیدی، قریبی شخص یا چیز کا کھو جانا اور ناکامیابی وجہ ہو سکتی ہیں۔ کئی مرتبہ بظاہر ایسی کوئی وجہ نظر نہیں آتی جو کہ ہماری افسردگی کا سبب ہو۔
زندگی کے معاملات۔
ناگہانی واقعات جیسا کہ اموات، طلاق، بےروزگاری دکھ کا سبب بنتے ہیں۔ اکثریت ان حالات سے نبرد آزما ہو کر امنی زندگی کو معمول پر لے آتے ہیں، مگر کچھ لوگ اس صدمے سے نہیں نکل پاتے۔
حالات و واقعات۔
ڈپریشن ہمیں گھیر سکتا ہے اگر ہم تنہا ہوں بنا کسی ساتھی یا دوست کے اور پریشانی میں مبتلا ہوں۔
امراض۔
موذی اور تکلیف دہ امراض ڈپریشن کا باعث بن سکتے ہیں۔ مثلاً سرطان، قلبی امراض اور دیگر بیماریاں۔
شخصیت۔
ڈپریشن کسی کو کسی بھی وقت ہو سکتا ہے۔ مگر آپ کی جنسی ساخت اور حالات کا عمل دخل بھی بڑی اہمیت کا حامل ہے۔
شراب نوشی۔
شراب کی زیادتی ڈپریشن کا باعث بنتی ہے۔ اکثر اوقات یہ کہنا مشکل ہو تا ہے کہ آیا ڈپریشن شراب نوشی کی وجہ سے ہے یا شراب نوشی ڈپریشن کی وجہ سے۔
جنس۔
خواتین میں شرح ڈپریشن مرد حضرات سے زیادہ ہے۔ زیادہ تر مرد اپنی نفسیات کو منظر عام پر ظاہر نہیں کرتے اور شراب یا غصے میں اپنی کیفیت دکھاتے ہیں۔ دوسری طرف خواتین پر گھر چلانے اور بچوں کی دوہری ذمہ داری ہو تی ہے۔
خاندانی مرض۔
ڈپریشن ایک نسل سے دوسری نسل تک منتقل ہو سکتا ہی۔ مثال کے طور پر اگر آپ کے والد یا والدہ کو ڈپریشن لاحق ہے تو آپ کو ۸ گنا زیادہ خطرہ ہے مقابل اس فرد کے جس کے خاندان میں ڈپریشن نہیں۔
مینک ڈپریشن یا جنون اور افسردگی کیا ہے؟
دس میں سے ایک فرد کو ڈپریشن کے ساتھ مینیا (دیوانہ پن) ہوتا ہے۔ ماضی میں اس بیماری کو مینک ڈپریشن کہا جاتا تھا۔ لیکن اب اس کا نام بائی پولر آفکٹیو ڈس آرڈر ہے۔
دیوانے پن میں آپ غیر معمولی طور پر خوش اور پھرتیلے ہوتے ہیں اور وہ حرکات کر بیٹھتے ہیں جو عام حالات میں نہیں کر تے۔ اس بیماری میں عورتوں اور مردوں کی شرع برابر ہے اور یہ ایک نسل سے دوسری نسل میں منتقل ہو سکتا ہے۔
کیا ڈپریشن کمزوری کی قسم ہے؟
ڈپریشن مضبوط انسان کو بھی نڈھال کر سکتا ہے۔مگر اس کو انفرادی کمزوری نہیں تصور کرنا چاہیئے۔ بجائے تنقید کے پریشانی کا حل کھوجنا چاہیئے۔
کب مدد مانگنی چاہیئے؟
1 ۔ اگر علامات برقرار رہیں اور آفاقہ نہ آئے۔
2۔ جب ڈپریشن کام، رشتوں اور دلچسپی کو متاثر کرنا شروع کردے۔
3۔ آپ یہ سوچنا شروع کر دیں کہ زندگی تاریک ہے اور دوسرے آپکے بنا زیادہ بہتر ہوں گے۔
آپکو جلد از جلد اپنے ڈاکٹر کو ملنا چاہئے اگر آپکی علامات کسی قریبی شخص سے بات چیت کے باوجود ٹھیک نہ ہوں۔
اپنی مدد آپ اپنے تک نہ رکھیے۔
کسی بھی پریشانی کی صورت میں اپنے قریبی شخص کو مطلع کیجئے۔ دل کا بوجھ ہلکا کرنا اپنے اندر خود ہی علاج ہے۔
کچھ کیجیئے۔
ہلکی پھلکی ورزش ذہنی نشوونما کیلئے بہت ضروری ہے۔ اس سے آپ اپنے آپ کو نہ صرف چاق وچوبند پائیں گے بلکہ آپ کی نیند بھی بہتر ہو گی۔ گھر پر کام خود کرنے کی کوشش کیجئے تاکہ آپکا ذہن مصروف رہے اور اس میں مایوس کن خیالات نہ آنے پائیں۔
اچھی غذا کھائیے۔
متوازن غذا کھانا بہت ضروری ہے اور ڈپریشن میں جسم ضروری معدنیات اور حیاتین سے محروم ہو جاتا ہے جس سے آپکی توانائی متاثر ہوتی ہے۔ پھل اور سبزیاں آپ کی غذائیت کے نہایت اہم ارکان ہیں اور انکا حصول بڑی اہمیت کا حامل ہے۔
شراب نوشی سے پرہیز۔
شراب کی زیادتی آپکی ذہنی اور جسمانی صحت کو بری طرح متاثر کرتی ہے۔ اگرچہ شراب پینے کے کچھ گھنٹے بعد آپ بہتر محسوس کرتے ہیں مگر یہ بہتری مصنوعی ہوتی ہے اور بعد ازاں آپ بدترین حالت میں ہوتے ہیں۔
نیند۔
سونے سے قبل سونے کی فکر نہ کریں۔ کچھ لوگ سونے سے پھلے ٹی وی دیکھنا، ریڈیو سننا یا پڑھنا پسند کرتے ہیں۔ اس کام سے بیچینی میں کمی آتی ہے اور نیند بھی بہتر ہوتی ہے۔
سبب کو سلجھائیے۔
اگر آپ کو اپنی پریشانی کے اسباب معلوم ہیں تو انکو لکھئے اور ان کا حل نکالنے کی کوشش کریں۔ پر امید رہیئے۔
یاد رکھیے۔ آپ جس تجربے سے گزر رہے ہیں اس سے اور لوگ بھی گزر چکے ہیں۔ ایک نہ ایک روز آپ اپنی آزمائش پر قابو پا لیں گے۔
ڈپریشن کا تجربہ آپ کے لئے مفید بھی ہو سکتا ہے۔ آپ ایک مضبوط انسان کے طور پر نمودار ہو سکتے ہیں اور حالات اور رشتوں کو شفافی سے پرکھ سکتے ہیں۔
آپ اپنی زندگی کے بارے میں فیصلے کر سکیں گے اور ان چیزوں سے اجتناب برتیں گے جو آپ کی پریشانی کا سبب بنی تھیں۔
کس قسم کی مدد موجود ہے۔
بیشتر مریض اپنے ڈاکٹر کے علاج سے صحت یاب ہو جاتے ہیں آپ کےمرض اور علامات کی شدت کو نظر میں رکھتے ہوئے طریقہ علاج تجویز کیا جاتا ہے۔ علاج کی اقسام میں گولیاں اور بذریعہ گفتگو علاج موجود ہیں۔
تد بیر / علاج بذریعہ نفسیاتی گفتگو
معمولی درجے کی ڈپریشن کا علاج آسان بات چیت کے زریعے ممکن ہے۔ آپ ماہر نفسیاتی گفتگو اسٹاف سے رجوع کر سکتے ہیں۔ یہ اسٹاف آپ کے ڈاکٹر کی سرجری میں بھی موجود ہو سکتا ہے یا آپکو کسی ماہر ادارے کے ساتھ منسلک کیا جا تا ہے۔ اگر آپکی پریشانی ازدواجی مشکلات کی وجہ ہے تو آپ متعلقہ ادارے سے رابطہ قائم کر سکتے ہیں۔
اگر آپ کا ڈپریشن کسی عاجزی یا رشتے داری کی تیاری کی وجہ سے ہے تو آپ اپنی مدد آپ کے گروپ میں شمولیت اختیارکر سکتے ہیں اگر آپ کی افسردگی کی وجہ اپنے عزیز کی موت ہے تو بھی آپ کی خدمت کے لئے ادارے موجود ہیں۔ اس ضمن میں آپ کو ادارے سے بات کر سکتے ہیں۔
اگر آپ سمجھتے ہیں کہ آپ اپنے احساسات رشتہ دار یا دوست کے ساتھ نہیں بانٹ سکتے تو ماہر نفسیاتی گفتگو آپکا بوجھ ہلکا کر نے میں مدد گار ہو گا۔ طریقہ علاج یا تدبیر کا تعین آپکی علالت اور اس کی شدت پر منحصر ہے۔
منفی خیالات کا آنا ڈپریشن کو ایندھن فراہم کرتا ہے۔ سی بی ٹی طریقہ علاج آپکی سوچ کے عمل میں تبدیلی لا کر منفی خیالات کو بتدریج حد تک کم کرتا ہے۔ اگر آپ کے لوگوں کے ساتھ تعلقات میں تناو تو آپ ڈائنیمک تھراپی
حاصل کر سکتے ہیں۔
بذریعہ گفتگو علاج کچھ عرصہ تک جاری رہتا ہے اور ایک ملاقات کا دورانیہ تقریباً ایک گھنٹے پر محیط ہوتا ہے۔ ملاقاتوں کی تعداد ۲۰۔۵ تک ہو تی ہے۔ مگر علاج کی مدت آپکا معالج طے کرتا ہے۔ جس کا انحصار آپکی تکلیف پر ہے۔
علاج بذریعہ نفسیاتی گفتگو کس طرح کام کرتا ہے؟
بات کرنے سے ہمارے دماغ کا بوجھ اترتا ہے۔ ہمیں یہ تسلی بھی ملتی ہے کہ ہم تنہا نہیں اور ہماری بات سننے والا موجود ہے جو کہ ہمیں صحیح سمت دکھاتا ہے۔
کاگنیٹیو بیحیویر تھراپی (سی پی ٹی)
اس علاج سے آپکی منفی سوچ میں تبدیلی واقع ہوتی ہے اور آپکا رویہ بھی درست ہو تا ہے۔
تدبیر
اس علاج سے آپ کو مدد ملتی ہے کہ آپ اپنے خیالات، تعلقات اور مشاہدے شفافی سے پرکھ سکیں۔
ڈائینیمک تھراپی۔
اگر آپ کی ماضی کی مشکلات آپکے حال پر اثر انداز ہو رہی ہیں تو اس طریقہ علاج سے آپکو مدد ملتی ہے۔
جماعت میں گفتگو۔
آپ اپنے تجربات دوسروں سے بانٹتے ہیں اور باہمی مشورہ سے حل تلاش کرتے ہیں۔
علاج بذریعہ نفسیاتی گفتگو کے مضر اثرات۔
گو کہ یہ طریقہ علاج بہت محفوظ ہے مگر اس کے کچھ مضر اثرات بھی ہو سکتے ہیں۔ ماضی کی مشکلات کے بارے میں بات کرنا تکلیف دہ ہو سکتا ہے۔ اگر آپ کو کسی بات پر تشویش ہے تو آپ اپنے معالج سے مشورہ کیجئے۔ یہ ضروری ہے کہ آپکا معالج تربیت یافتہ ہو جس پر آپ بھروسہ کر سکیں کچھ علاقوں میں ماہرین کی کمی ہے اور آپکو کچھ عر صہ انتظار کرنا پڑ سکتا ہے۔
ڈپریشن مخالف ادویات۔
ان ادویات کا استعمال شدید درجے کے ڈپریشن میں ہوتا ہے۔ اگرچہ یہ دوائیا ں خواب آور نہیں ہو تیں مگر آپکو آرام پہنچاتی ہیں۔ آپ کے مزاج میں بہتری آتی ہیں اور آپ روزمرہ کے کام خوش اسلوبی سے انجام دے سکتے ہیں۔ شروع کے ۴۔۲ ہفتے تک شاید آپ کو کو ئی بہتری محسوس نہ کریں کیونکہ ان ادویات کے کام کرنے کا طریقہ دوسری ادویات سے مختلف ہے۔ مگر شروع کے کچھ دنوں آپکی نیند میں بہتری آتی ہے اور بے چینی کم ہو تی ہے۔

migraine-treatment,-migraine-cure
sperm-discharge-during-sleep,Nightfall-(स्वप्नदोष),جریان-,احتلام

Leave a Reply